90

امریکا میں پُرتشدد مظاہرے، 40 شہروں میں کرفیو

واشنگٹن اور نیویارک میں شدید احتجاج، 9 ہزار مظاہرین گرفتار


مریکا میں مظاہرین کرفیو توڑ کر سڑکوں پر آ گئے، واشنگٹن اور نیویارک میں لوگوں نے سیاہ فام شہری کی ہلاکت پر بھرپور احتجاج کیا،، نو ہزارا مظاہرین کو گرفتار کرلیا گیا،،
وی او
واشنگٹن سے ہالی وڈ تک لاکھوں لوگوں نے کرفیو توڑ کر احتجاج کیا، پولیس اہلکار کے ہاتھوں مارنے جانے والے سیاہ فام جارج فلائیڈ کی فیملی نے بھی مظاہروں میں شرکت کی،، جارج کے آبائی شہر ہیوسٹن میں ہونے والے مظاہرے میں بڑے پیمانے پر لوگوں نے شرکت کی، لاس اینجلس میں پولیس اور فوجی اہلکاروں کو مظاہرین کے ساتھ گھٹنوں پر بیٹھنا پڑا، مظاہرین نے فوجیوں سے مارچ میں شرکت کرنے کا بھی مطالبہ کیا۔
امریکی حکام نے چالیس شہروں میں کرفیو لگا رکھا ہے، پینٹاگون کا کہنا ہے سولہ سو فوجیوں کو واشنگٹن کے اردگرد کے موجود ائیر بیسز پر تعینات کر دیا گیا ہے،
اقوام متحدہ کے جنرل سیکرٹری انتونیو گوتریس نے مظاہروں پر اظہار تشویش کرتے ہوئے کہا کہ امریکی انتظامیہ صبرو تحمل سے کام لے اور مظاہرین پر امن رہیں،، نسل پرستی ایک نفرت ہے اسے معاشرے سے ختم کرنا چاہیے،،
امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر جاری اپنے ایک بیان میں کہا ان کی انتظامیہ نے سیاہ فاموں کو تحفظ فراہم کیا،،سیاہ فام کمیونٹی کے لیے ابراہم لنکن کے بعد سب سے زیادہ کام کیا،،

اپنا تبصرہ بھیجیں