lockdown 49

صوبائی دارلحکومت کے 15 علاقوں میں اسمارٹ لاک ڈاؤن لگانے کا فیصلہ

لاہور صوبائی دارلحکومت کے 15 علاقوں میں اسمارٹ لاک ڈاؤن لگانے کا فیصلہ کرلیا گیا، ان علاقوں میں مسلم ٹاؤن، علامہ اقبال ٹاؤن، گارڈن ٹاؤن، گلشن راوی، ڈیفنس، شادمان، انارکلی اور مزنگ کے علاقے شامل ہیں، لاک ڈاؤن کے دوران ایس اوپیز پر سختی سے عملدرآمد کروایا جائے گا۔ تفصیلات کے مطابق وزیراعلیٰ پنجاب سردارعثمان بزدارکی ہدایت پر آج وزیراعلیٰ آفس میں کابینہ کمیٹی برائے انسداد کورونا کا خصوصی اجلاس منعقد ہوا، جس میں کورونا کی دوسری لہر سے عوام کو بچانے اور حفاظتی اقدامات پرعملدرآمد کے لئے اہم فیصلے گئے۔
کابینہ کمیٹی برائے انسداد کورونا کے اجلاس میں صوبے میں مریضوں کی تعداد میں اضافے پر تشویش کااظہار کیا اورکورونا کیسوں والے علاقوں میں اسمارٹ لاک ڈاؤن کا فیصلہ کیا گیا۔
اجلاس میں بعض مارکیٹوں اور بازاروں میں کورونا ایس او پیز کی خلاف ورزی کا سخت نوٹس لیا گیا اورانسداد کورونا ایس او پیز کی خلاف ورزی کرنے والی مارکیٹوں اور بازاروں کو بند کرنے کا فیصلہ کیا گیا- اجلاس کے بعد ضلعی انتظامیہ لاہور نے بھی کورونا کیخلاف مئوثر اقدامات اٹھاتے ہوئے 15 علاقوں میں اسمارٹ لاک ڈاؤن لگانے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

مسلم ٹاوٗن میں سی بلاک، علامہ اقبال ٹاؤن میں سکندر بلاک، عمر بلاک اور رضا بلاک میں گلشن اقبال، اسی طرح کیولری گراؤنڈ، ڈیفنس فیزون، فیز 6 کے 2 بلاکس سمیت ایچ بی ایف سی بلاک بی، عسکری الیون کی 2 گلیوں میں بھی لاک ڈاؤن لگایا جائےگا۔ جبکہ انارکلی، مزنگ، شادمان اور گلشن راوی کے کچھ علاقوں میں اسمارٹ لاک ڈاؤن نافذ کیا جائے گا۔ مزید برآں کابینہ کمیٹی برائے انسداد کورونا کے خصوصی اجلاس میں صوبائی وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب میں پازیٹو کیسوں کی تعداد میں اضافہ ہورہاہے اورکورونا ٹیسٹوں کے مثبت آنے کی شرح بھی بڑھی ہے۔
انہوں نے کہاکہ پنجاب کے سرکاری ہسپتالوں میں 418 مریض زیر علاج ہیں اور76 مریضوں کی حالت تشویشناک ہے۔ صوبائی وزیر صحت نے کہاکہ وزیراعلیٰ عثمان بزدار کی ہدایت پر ضروری ادویات اور پی پی ایز کا وافر سٹاک موجود ہے۔ محکمہ صحت کورونا ٹیسٹوں کے لئے مزید پی سی آر کٹس خریدے گا -صوبائی وزیر صنعت میاں اسلم اقبال نے کہاکہ جن علاقوں میں کورونا کے مریضوں میں اضافہ ہواہے وہاں سمارٹ لاک ڈاؤن کیاجائے گا-کورونا کی دوسری لہر پر قابوپانے کے لئے ہر ضروری اقدام اٹھائیں گے-شہریوں کی جانب سے ماسک کی پابندی نہ کرنے سے کورونا کے مریضوں میں اضافہ ہورہاہے-بازاروں اور مارکیٹوں میں ماسک کی پابندی پر سختی سے عملدرآمد کرائیں گے-تاجر تنظیمیں بازارو ں اور مارکیٹوں میں ماسک پہننے کی پابندی پر عمل کرانے کی پابندہوں گی-ایس او پیز پر عملدرآمد نہ کرنے والی مارکیٹوں او ر بازاروں کو وارننگ دیں گے اوربعد میں ایسی مارکیٹوں او ربازاروں کو سیل بھی کیاجائے گا- انہوں نے کہا کہ اجلاس میں اس امر پر اتفاق کیا گیاہے کہ ہسپتالوں میں بستروں کی بہترین مینجمنٹ کے لئے لائحہ عمل تشکیل دیاجائے گا اوربستروں کی مینجمنٹ کے لئے علیحدہ ڈیش بورڈ بنایاجائے گا-ڈیش بورڈ پر ہسپتالوں میں بستر کے حوالے سے معلومات دستیاب ہوں گی-انہوں نے کہاکہ عوام کی صحت سب سے زیادہ مقدم ہے-عوام کی زندگیوں کے تحفظ کے لئے ضروری فیصلے کئے جائیں گے-اجلاس میں راولپنڈی انسٹی ٹیوٹ آف یورالوجی کو کورونا ہسپتال قرار دینے کا فیصلہ کیاگیا-اجلاس میں ریپڈ ٹیسٹ بھی متعارف کرانے کی تجویز پر غورکیاگیااورریپڈ ٹیسٹ متعارف کرانے کے بارے میں ٹیکنیکل گروپ اپنی حتمی سفارشات پیش کرے گا-اجلاس میں شادی ہالوں اور مارکیز میں شادی بیاہ کی تقریبات کے حوالے سے صوبائی وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد اور صوبائی وزیرصنعت میاں اسلم اقبال کی سربراہی میں کمیٹی تشکیل دی گئی۔
کمیٹی شادی تقریبات اور شادی ہالوں و مارکیز کے ایس او پیز کے حوالے سے 24 گھنٹے میں حتمی سفارشات پیش کرے گی۔ صوبائی وزراء ڈاکٹر یاسمین راشد، میاں اسلم اقبال،معاون خصوصی اطلاعا ت ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان،چیف سیکرٹری، انسپکٹر جنرل پولیس، سینئر ممبر بورڈ آف ریونیو،ایڈیشنل چیف سیکرٹری داخلہ، کمشنرلاہور ڈویژن، سیکرٹری سپیشلائزڈ ہیلتھ کیئر اینڈ میڈیکل ایجوکیشن،سیکرٹری پرائمری و سکینڈری ہیلتھ،اعلیٰ افسران اور عسکری حکام نے اجلاس میں شرکت کی۔
کمشنر ملتان ڈویژن اور کمشنر راولپنڈی ڈویژن ویڈیولنک کے ذریعے اجلاس میں شریک ہوئے۔ بعدازاں وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے کہا کہ کورونا کے بڑھتے ہوئے کیسز کے پیش نظر متاثرہ علاقوں میں شہریوں کے وسیع تر مفاد میں لاک ڈاؤن کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ باہر نکلتے وقت ماسک کی پابندی ہر شہری کے لئے لازم ہے۔ مارکیٹوں او ربازاروں میں ماسک کی پابندی پر سختی سے عملدرآمد کرانے کے لئے ہدایات جاری کر دی ہیں۔
وزیراعلیٰ نے کہا کہ صوبے کے عوام کی زندگیوں کے تحفظ کے لئے ہر ضروری اقدام اٹھائیں گے۔ کورونا کی دوسری لہر پر قابو پانے کے لئے انتظامیہ اور پولیس کو ہدایات جاری کردی ہیں-شہریوں کی زندگیاں سب سے زیادہ عزیز ہیں۔ ایس او پیز پر عملدرآمد میں کوتاہی برداشت نہیں۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب میں کورونا کے ایکٹو مریضوں کی تعداد6,876 ہوگئی ہے۔ 24 گھنٹے کے دوران کورونا کے345 کنفرم کیسز سامنے آئے اور1مریض جاں بحق ہوا-گزشتہ 24 گھنٹے کے دوران9,406 کورونا تشخیصی ٹیسٹ کئے گئے اور پنجاب میں کورونا کے اب تک 1680320 ٹیسٹ کئے جا چکے ہیں۔ کورونا کے 106922 مریضوں میں سے 97638 مریض صحت یاب ہوچکے ہیں- پنجاب میں کورونا سے 2408 مریض جاں بحق ہوئے-

اپنا تبصرہ بھیجیں