11

فی کلو پیاز کی قیمت 476 روپے

پاکستان میں سبزیوں کی قیمتیں آسمان کو چھو رہی ہیں مہنگائی کے ستائے عوام کیلئے جینا دو بھر ہو گیا ہے تاہم جنوبی ایشیا میں ایک اور ملک ایسا بھی ہے جہاں پیاز کی قیمت 476 پاکستانی روپے کی سطح پر پہنچ گئی ہے۔

بنگلہ دیش میں پیاز کی قیمت ریکارڈ سطح پر جا پہنچی اور 476 پاکستانی روپے فی کلو ہو گئی، بنگلادیشی وزیراعظم حسین واجد نے کھانے میں پیاز کا استعمال ترک کر دیا ہے۔ اضافہ بھارت سے درآمد میں کمی پرہوا، جس کے بعد بنگلادیشی وزیراعظم حسینہ واجد نے کھانے میں پیاز کا استعمال ترک کردیا ہے۔ بنگلہ دیش نے کھانوں کی قیمتیں بلندترین سطح پر پہنچنے کے باعث فوری طور پر فضائی راستے سے پیاز درآمد کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

بھارت میں حالیہ مون سون سیز کی دوران پیاز کی فصل کو خاصا نقصان پہنچا تھا اور پیداوار معمول سے کم ہوئی جس کے سبب پڑوسی ممالک کو برآمد کرنے پر پابندی لگادی گئی تھی۔

جنوبی ایشیا میں پیاز کی قیمتوں میں اضافہ حساس معاملہ ہے جہاں قلت بڑے پیمانے پر عدم اطمینان اور سیاسی مسائل بھی پیدا کرسکتی ہے اور بنگلہ دیش میں بھارتی برآمدات رکنے کی وجہ سے اس کی قیمت میں ہوشربا اضافہ ہو گیا۔

یاد رہے کہ بنگلہ دیش میں اہم سبزیاں زیادہ سے زیادہ 30 ٹکا (55 پاکستانی روپے) فی کلو کی قیمت میں دستیاب ہوتی ہیں لیکن پابندی کے بعد سے قیمتیں 260 ٹکا (476 پاکستانی روپے) فی کلو تک جا پہنچیں۔ اس حوالے سے حسینہ واجد کے ڈپٹی پریس سیکریٹری حسن جاہد توشر نے بتایا کہ فضائی مال برداری کے ذریعے پیاز درآمد کی جارہی ہے۔

بنگلا دیشی وزیراعظم نے پیاز کی بڑھتی ہوئی قیمت کے پیش نظر پاکستان کی طرف دیکھنا شروع کر دیا ہے جسے ماہرین ’’پیاز ڈپلومیسی‘‘ بھی کہہ رہے تھے۔

بنگلا دیشی حکومت نے ملک میں پیاز کی قلت سے نمٹنے کے لیے تقریباً 15 سال بعد پاکستان سے 300 ٹن پیاز درآمد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ گذشتہ ستمبر کو بھارت نے پیاز برآمد کرنے پر پابندی عائد کی تھی، جس کے بعد بنگلہ دیش میں اس کی قیمتوں میں ہوش ربا اضافہ ہو گیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں