123

لاہور جلسہ مریم نواز کی سیاست کا تعین کرے گا، ن لیگ کو ناکامی کا ڈر نوازشریف دن رات لاہور جلسے کی کامیابی کیلئے کام کررہے ہیں ، حکومت نے رکاوٹیں نہ ڈالیں تو پی ڈی ایم کے جلسہ کی کامیابی کے امکانات بہت کم ہیں ، اینکر پرسن عمران ریاض خان کا تجزیہ

لاہور جلسہ مریم نواز کی سیاست کا تعین کرے گا، ن لیگ کو ناکامی کا ڈر
نوازشریف دن رات لاہور جلسے کی کامیابی کیلئے کام کررہے ہیں ، حکومت نے رکاوٹیں نہ ڈالیں تو پی ڈی ایم کے جلسہ کی کامیابی کے امکانات بہت کم ہیں ، اینکر پرسن عمران ریاض خان کا تجزیہ
پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کی کامیابی یا ناکامی کا انحصار لاہور میں ہونے والے جلسہ پر ہے ، سابق وزیراعظم نوازشریف دن رات لاہور جلسے کی کامیابی کیلئے کام کررہے ہیں، کیوں کہ یہاں سے مریم نواز کی سیاست کا تعین بھی ہوجائے گا، ان خیالات کا اظہار اینکرپرسن عمران ریاض خان نے کیا۔اپنے یوٹیوب چینل پر گفتگو میں انہوں نے کہا کہ اگر حکومت کی طرف سے رکاوٹیں نہ دالی گئیں تو پی ڈی ایم کے لاہور جلسہ کی کامیابی کے امکانات بہت کم ہیں، یہی وجہ ہے کہ مسلم لیگ ن کے قائد نوازشریف نے اس وقت اپنی جماعت کے سوشل میڈیا پر کارکنان سے گفتگو کی، کیوں کہ سوشل میڈیا کے ذریعے سے ایک مہم چلا کر لوگوں کو جلسہ تک لانے کی اینکر پرسن کے مطابق اپنے خطاب میں نوازشریف نے چند سوالات بھی اٹھائے جن میں سے ایک یہ تھا کہ کیا آئین شکنوں کو بے نقاب کرنا غداری ہے؟حالاں کہ ماضی میں نوازشریف وک کامیابی دلانے کیلئے اداروں نے کام کیا لیکن اس وقت ان کی نظر میں آئین شکنی نہیں ہوئی تھی، اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ مل کر میاں صاحب نے خود بھی بہت سی حکومتیں گرائیں اور بنائیں، جب کہ اس ملک میں صرف ایک شخص کے تیسری بار وازیراعظم بننے کیلئے آئین بھی تبدیل کیا گیا۔
دوسری طرف مسلم لیگ ن کے رہنما احسن اقبال نے تصدیق کی ہے کہ سابق وزیراعظم نوازشریف 13دسبر کے لاہور جلسہ سے خطاب کریں گے ، میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو میں انہوں نے کہا کہ 13 دسمبر کو لاہور میں ہونے والا پی ڈی ایم کا جلسہ ملکی تاریخ کا سب سے بڑا جلسہ ہو گا جس سے نوازشریف بھی خطاب کریں گے ، جس کے بعد پی ڈی ایم کا اگلا پڑاؤ اسلام آباد میں ہوگا ، لانگ مارچ عمران خان سے نجات حاصل کرنے کے لیے ہو گا جس سے حکومت جھاگ کی طرح بہہ جائے گی کیوں کہ اس اناڑی اور نالائق حکومت کا جانا بہت ضروری ہے ، سابق وفاقی وزیر احسن اقبال نے کہا کہ پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ سیاسی نہیں بلکہ ایک قومی تحریک بن چکی ہے ، اگر ملتان کی طرح لاہور میں پکڑ دھکڑ شروع کی گئی تو پورا لاہور جلسہ گاہ بن جائے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں