176

نواز شریف کی استعفے مولانا فضل الرحمان کے پاس جمع کروانے کی تجویز

اسلام آباد : پاکستان مسلم لیگ ن کے قائد سابق وزیر اعظم میاں نواز شریف نے استعفے مولانا فضل الرحمان کے پاس جمع کروانے کی تجویز دے دی، تمام جماعتوں نے نوازشریف کی تجویز کی حمایت کردی، مولانا فضل الرحمان لانگ مارچ کے بعد استعفے اسپیکر کو جمع کروا دیں گے۔ ذرائع کے مطابق پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے صدر مولانا فضل الرحمان کی زیرصدارت اپوزیشن جماعتوں کا اجلاس ہوا،اجلاس میں تمام جماعتوں کے قائدین اور سینئر رہنماؤں نے شرکت کی۔
اجلاس میں مولانا فضل الرحمان نے جیل بھرو تحریک کی تجویز دے دی ہے۔ تمام جماعتیں اپنے کارکنان کو اس حوالے سے تیار رکھیں۔ گرفتاریوں کی صورت میں قومی شاہراؤں کو بند کردیا جائے۔ کچھ رہنماؤں نے اجلاس میں تجویز دی گئی کہ نئے سال کے آغاز میں ہی اسلام آباد کی طرف لانگ مارچ کیا جائے گا۔
استعفے لانگ مارچ کے بعد دیے جائیں گے اور استعفو ں کے آپشن کا بروقت استعمال کیا جائے گا۔

کچھ رہنماؤں اور دوستوں نے استعفے جمع کروانا شروع کردیے ہیں ، جب وقت آئے گا تو استعفوں کا اعلان کردیا جائے گا۔ اجلاس میں مسلم لیگ ن کے قائد نوازشریف نے تجویز دی کہ پی ڈی ایم کی تمام جماعتیں اپنے استعفے مولانا فضل الرحمان کے پاس جمع کروا دیں۔ جبکہ مولانا فضل الرحمان لانگ مارچ کے فوری بعد استعفے اسپیکر کوپیش کردیں گے۔ اس موقع پر نوازشریف نے آصف زرداری سے اسلام آباد کے ماحول کے بارے دریافت کیا۔
آصف زرداری نے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ کیا میاں صاحب کمرے میں بھی ماسک پہنا ہوا ہے، جس پر نوازشریف کے جواب پر پی ڈی ایم کے تمام ارکان قہقے لگانے پر مجبور ہوگئے۔ مزید برآں مسلم لیگ ن کے مرکزی رہنماء رانا ثناء اللہ نے کہا کہ نوازشریف نے 20 ستمبر کو استعفوں کا بتا دیا تھا، پیپلزپارٹی بھی استعفے دینے کیلئے تیار ہیں۔ لانگ مارچ کے بعد استعفوں اور ریلیوں کا آپشن موجود ہے۔ آج پی ڈی ایم قیادت سر جوڑ کر بیٹھی ہوئی ہے، متفقہ طورپر آئندہ کے لائحہ عمل کا فیصلہ کیا جائے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں