INDIA 27

پاکستان کا 11ہندو شہریوں کے بھارت میں قتل کی تحقیقات کے لیے اقوام متحدہ سے رابط

اسلام آباد: پاکستان نے بھارت میں 11 پاکستانی ہندوﺅں کے ماورائے عدالت قتل کی تحقیقات کے لیے اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کمیشن سے رابط کیا ہے. وفاقی وزیر انسانی حقوق ڈاکٹر شیریں مزاری نے اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کمیشن کو خط لکھا ہے جس میں معاملے کی تحقیقات کے لیے تحقیقاتی ٹیم تشکیل دینے کا مطالبہ کیا گیا ہے ڈاکٹر شیریں مزاری نے خط میں لکھا کہ اگست میں بھارتی ریاست راجستھان کے شہر جودھ پور میں 11 پاکستانی ہندوﺅں کو قتل کیا گیا، پاکستان کو تاحال واقعے کی کوئی معلومات فراہم نہیں کی گئی جبکہ لواحقین کو میتیں دینے سے بھی انکار کیا جا رہا ہے.

انہوں نے لکھا ہے کہ معلومات کی عدم فراہمی اور لواحقین کو میتیں نہ دینا بین الاقوامی انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے، معاملے کی تحقیقات تک نہیں کرائی جا رہی لہٰذا اقوام متحدہ معاملے کی تحقیقات کے لیے تحقیقاتی ٹیم تشکیل دے. انہوں نے کہا کہ 11 پاکستانیوں کی میتیں لواحقین کو دینے کے لیے اقدامات کیے جائیں، بھارت کو عالمی انسانی حقوق قوانین پر عملدرآمد کا پابند کیا جائے اور متاثرہ خاندانوں کی مالی معاونت کا بھی پابند کیا جائے واضح رہے کہ 10 اگست کو برطانوی نشریاتی ادارے نے رپورٹ شائع کی تھی کہ بھارت کی ریاست راجستھان میں پاکستان سے ہجرت کر جانے والے ایک ہی خاندان کے 11 افراد ہلاک ہوگئے اور صرف ایک فرد ہی بچ سکا، متاثرہ خاندان 8 سال سے وہاں مقیم تھا.

رپورٹ کے مطابق 8سال قبل پاکستان سے ہجرت کرکے بھارت میں آباد ہونے والے خاندان کے 11 افراد کی لاشیں راجستھان کے ضلع جودھپور میں ایک کھیت سے ملی ہیں اور خاندان کا صرف ایک فرد ہی زندہ بچ سکاتھا پاکستان ہندو کونسل نے پاکستانی ہندومہاجرین کی ہلاکت پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے بھارتی حکومت کو اس کا ذمہ دار قرار دیا. پاکستان ہندو کونسل کے سربراہ ڈاکٹر رمیش کمار وانکوانی نے ہنگامی بیان میں کہا تھا کہ پاکستانی حکومت سے اس واقعے کو عالمی سطح پر اٹھانے کا مطالبہ ہے انہوں نے کہا کہ یہ معصوم پاکستانی ہندوخاندان نے 8 سال قبل 2012 میں اچھے مستقبل کی امید میں سندھ سے بھارت نقل مکانی کی تھی لیکن بھارت میں انہیں بے رحم حالات پر چھوڑ دیا گیا.

پاکستان ہندوکونسل کے مطابق متاثرہ خاندان کا تعلق سندھ کے ضلع سانگھڑ میں شہداد پور سے ملحق گاﺅں لنڈو کی بھیل برادری سے ہے 25 ستمبر کو ملکی تاریخ میں ممکنہ طور پر پہلی مرتبہ ہندو برادری کے سینکڑوں افراد نے بھارت میں 11 پاکستانی ہندوﺅں کے قتل کے خلاف وفاقی دارالحکومت میں سفارتی انکلیو ژکے اندر داخل ہو کر بھارتی ہائی کمیشن کے سامنے احتجاج کیا تھا.

اپنا تبصرہ بھیجیں