97

پاکستان کرکٹ سے ’یس باس‘ کا کلچر ختم کرنا انتہائی ضروری :محمد عامر ہر کھلاڑی چاہتا ہے کہ اسکی عزت کی جائے، شاید اس فیصلے سے وہ لوگ کچھ سبق سیکھ لیں جو پاکستان کرکٹ کو تباہ کرنے پر تلے ہوئے ہیں:پیسر

پاکستان کرکٹ سے ’یس باس‘ کا کلچر ختم کرنا انتہائی ضروری :محمد عامر
ہر کھلاڑی چاہتا ہے کہ اسکی عزت کی جائے، شاید اس فیصلے سے وہ لوگ کچھ سبق سیکھ لیں جو پاکستان کرکٹ کو تباہ کرنے پر تلے ہوئے ہیں:پیسر

قومی فاسٹ بائولر محمد عامر نے موجودہ کرکٹ ٹیم انتظامیہ کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے ’یس باس‘ کا کلچرختم کرنے کا مطالبہ کیا ۔ 28 سالہ محمد عامر نے اپنی ریٹائرمنٹ کی وجوہات پر مبنی تفصیلی ویڈیو سوشل میڈیا پر شیئرکرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے قومی ٹیم سے ڈراپ ہونے پر کھیل سے علیحدگی اختیار نہیں کی بلکہ اس کی وجہ ٹیم انتظامیہ ہے جس نے لوگوں کے ذہن میں یہ بات ڈالی کہ وہ پاکستان کے لیے مزید نہیں کھیلنا چاہتے ہیں جب کہ مکی آرتھر پر مشتمل سابق ٹیم انتظامیہ نے ان کے ٹیسٹ کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کے اعلان پر انہیں سراہا تھا کیونکہ انہیں کندھے کی انجری کے بارے میں علم تھا۔
ان کا کہنا تھا کہ سابق کرکٹرز 2010ء میں کی گئی غلطی کو جواز بنا ان پر تنقید کرتے رہتے ہیں اور سزا کاٹنے کے بعد معافی مانگنے کے باوجود انہیں ماضی یاد دلایا جاتا ہے ۔
محمد عامر نے کہا کہ انہوں نے اپنی ریٹائرمنٹ کے فیصلے سے بورڈ کو آگاہ کردیا ہے ،پرستار ان سے ریٹائرمنٹ واپس لینے کی درخواست کررہے ہیں لیکن انہوں نے یہ فیصلہ جذباتی ہوکر نہیں کیا تھا۔

محمد عامر کا مزید کہنا تھا کہ آسٹریلیا کیخلاف ٹیسٹ سیریز میں شکست کے بعد ہیڈ کوچ مصباح الحق اور بائولنگ کوچ وقار یونس نے ان پر لیگ کرکٹ سے پیسے کمانے کیلئے ٹیسٹ کرکٹ چھوڑنے کا الزام لگایا تاکہ لوگ ان کے خلاف ہو جائیں۔ محمد عامر کا مزید کہنا تھا کہ چیئرمین پی سی بی احسان مانی اور سی ای او وسیم خان سے ان کا کوئی اختلاف نہیں ، انٹرنیشنل کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کی وجہ ٹیم انتظامیہ کا منفی رویہ ہے ،پاکستان کرکٹ سے ’یس باس‘ کا کلچر ختم کرنا بہت ضروری ہے ،عزت دو ، عزت لو، آج کی دنیا میں ہر ایک یہ چاہتا ہے کہ اس کی عزت کی جائے، شاید ان کے اس فیصلے سے وہ لوگ کچھ سبق سیکھ لیں جو پاکستان کرکٹ کو تباہ کرنے پر تلے ہوئے ہیں ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں