CORONA 124

کورونا سے بچاﺅ کیلئے حکمت عملی ‘پنجاب حکومت کی ملازمین کو گھروں دفتری امور انجام دینے کی ہدایت

اسلام آباد/لاہور:کومت پنجاب حکومت نے کورونا سے بچاﺅ کیلئے حکمت عملی کوحتمی شکل دے دی ہے اور تمام سرکاری دفاتر بند کرکے سرکاری ملازمین سے کہا گیا ہے کہ وہ گھروں سے دفتری امور انجام دیں جبکہ وفاقی حکومت اور صوبائی حکومتیں تعلیمی اداروں کے بارے میں آج فیصلہ کریں گی. معتبر حکومتی ذرائع کا کہنا ہے کہ وفاق‘پنجاب اور کے پی کے کی حکومتیں تعلیمی ادارے دو ماہ کے لیے بند کرنے پر متفق ہوچکی ہیں جبکہ اس میں مزید توسیع کا امکان ہے تاہم ابتدائی احکامات دو ماہ کے لیے جاری کیئے جائیں گے ذرائع نے بتایا کہ سردی میں وائرس کے پھیلاﺅ کے امکانات زیادہ ہیں لہذا فیصلہ کیا گیا ہے کہ تعلیمی اداروں کو فوری طور پر بند کردیا جائے .
کورونا وائرس کے سے پاکستان میں مزید34 افراد ہلاک ہوگئے ہیں جس کے بعد مرنے والوں کی کل تعداد 7 ہزار696 ہوگئی ہے نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کی جانب سے جاری اعدادوشمار کے مطابق گزشتہ24گھنٹوں میں کورونا کے مزید 2 ہزار 756 کیس رپورٹ ہوئے اور متاثرہ افراد کی مجموعی تعداد 3لاکھ 76ہزار929 تک پہنچ چکی ہے. پاکستان میں کورونا سے صحت یاب افراد کی تعداد3لاکھ30ہزار885 ہے اور 38 ہزار348 زیر علاج ہیں کورونا سے متاثرہ ایک ہزار 677 مریضوں کی حالت تشویشناک ہے اسلام آباد میں کورونا کیسز کی تعداد27 ہزار18، خیبرپختونخوا44 ہزار599، سندھ ایک لاکھ 63 ہزار329، پنجاب ایک لاکھ 14 ہزار508، بلوچستان 16 ہزار810، آزاد کشمیرمیں6ہزار123 اور گلگت بلتستان میں 4 ہزار 542 افراد کورونا سے متاثر ہوچکے ہیں.
کورونا کے سبب سب سے زیادہ اموات پنجاب میں ہوئی ہیں جہاں 2 ہزار861افراد جان کی بازی ہار چکے ہیں سندھ میں 2 ہزار829، خیبر پختونخوا ایک ہزار325، اسلام آباد327، گلگت بلتستان95، بلوچستان میں 161 اور آزاد کشمیر میں144 افراد جان کی بازی ہار چکے ہیں حکومت کا کہنا ہے کہ پاکستان میں کورونا وائرس کی دوسری لہرشروع ہو چکی ہے اور اس سے نمٹنے کے لیے ایس اوپیز پر سختی سے عمل کرنا ہو گا این سی او سی کے مطابق ملک کے 15 بڑے شہروں میں کورونا وبا تیزی سے پھیل رہی ہے پاکستان میں80 فیصد کورونا کیسز 11گیارہ بڑے شہروں سے رپورٹ ہوئے ہیں صوبائی حکومتوں کو ہدایت کی گئی ہے کہ بازاروں، شاپنگ مالز، پبلک ٹرانسپورٹ، ریسٹورنٹس میں ایس او پیز اور ماسک کو لازم قرار دیں اورشہری گھروں سے باہر نکلتے وقت ماسک لازمی پہنیں۔
حکومتی اور نجی سیکٹرز کے دفاتر میں کام کرنے والوں کے لیے ماسک پہننا لازم ہے.

ادھر لاہور میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے صوبائی وزیر صنعت و تجارت میاں اسلم کا کہنا ہے کہ تمام سرکاری محکموں کے ملازمین گھر سے امور انجام دیں گے قبل ازیں حکومت پنجاب نے سرکاری ملازمین کیلئے پالیسی بنائی تھی کہ55 سال سے زائد عمر کے ملازمین گھر سے سرکاری امور انجام دیں گے. میاں اسلم اقبال کے مطابق گھر سے کام کرنے کی نئی پالیسی کا اطلاق پنجاب کے تمام سرکاری محکموں میں ہوگا پنجاب بھر میں سیاسی سرگرمیوں پر موثر طریقے سے پابندی لگانے کا فیصلہ بھی کیا گیا ہے لاہور، راولپنڈی، فیصل آباد اور ملتان میں کورونا کے پھیلاﺅ کی شرح دیگر شہریوں سے زیادہ ہے.
کورونا کے زیادہ کیسز والے شہروں میں ایس او پیز پر سختی سے عمل درآمد کیا جائے گا مارکیٹوں میں کورونا ایس اوپیز پرعملدرآمد کرانے کے لیے وزیر صنعت کو اہم ٹاسک سونپا گیاوزیر صنعت 23 نومبر سے تاجروں کیساتھ ایس او پیز پر عملدرآمد کیلئے ملاقاتیں کریں گے. حکام کا کہنا ہے کہ تعلیمی اداروں میں این سی او سی کے فیصلوں کے مطابق عملدرآمد کرائیں گے پاکستان میں کورونا وائرس کی دوسری لہر مزید شدت اختیار کر گئی ہے صوبہ پنجاب میں کورنا وائرس کی صورتحال دیگر صوبوں کی نسبت زیادہ تشویشناک ہوتی جا رہی ہے.
واضح رہے کہ دنیا میں عالمی وبا کے سبب 5 کروڑ89 لاکھ83 ہزار531افراد متاثر اور 13 لاکھ93ہزار571 اموات ہوئی ہیں اب تک کورونا کے 4 کروڑ76لاکھ 5 ہزار سے زائد مریض صحت یاب ہوچکے ہیں اور ایک کروڑ68لاکھ 24ہزار439 زیرعلاج ہیں. کورونا کے باعث سب سے زیادہ کیسز اور اموات امریکہ میں رجسٹرڈ ہوئی ہیں۔ امریکہ میں کورونا سے 2 لاکھ 62ہزار696 اموات اور ایک کروڑ25 لاکھ 88 ہزار سے زائد کیسز رپورٹ ہو چکے ہیں بھارت کورونا کیسز کے اعتبار سے دنیا میں دوسرے نمبر پر ہے جہاں اموات کی تعداد ایک لاکھ 33 ہزار773 اور91لاکھ 40 ہزار سے زائد افراد میں وائرس کی تشخیص ہو چکی ہے برازیل میں کورونا سے ہونے والی اموات کی مجموعی تعداد ایک لاکھ 69 ہزار197 اور 60 لاکھ71 ہزار سے زائد افراد متاثر ہیں.
فرانس میں 21 لاکھ 40ہزار سے زائد افراد متاثر اور48 ہزار732 جان کی بازی ہار چکے ہیں روس میں 20 لاکھ 89 ہزار سے زائد افراد کورونا وائرس سے متاثر ہو چکے ہیں اور اموات کی مجموعی تعداد36 ہزار179 ہے. اسپین میں 15 لاکھ 89 ہزار سے زائد افراد متاثر ہیں جبکہ 42 ہزار 619 افراد ہلاک ہوچکے ہیں برطانیہ میں15 لاکھ12 ہزار کورونا کیسز اور55 ہزار24 اموات رپورٹ ہوئی ہیں یاد رہے کہ یورپ کے بیشتر ممالک میں وبا کی دوسری لہر کے پیش نظر لاک ڈاﺅن شروع ہوچکے ہیں اور کئی ممالک میں مکمل جبکہ کئی میں جزوی لاک ڈاﺅن ہے.
ماہرین کا کہنا ہے کہ وائرس کی ہیت میں تبدیلیوں کی وجہ سے ویکسین کی تیاری میں وقت لگ رہا ہے ادھر معاشی تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے پوری دنیا کی اکنامی ”ری سیٹ“ہورہی ہے سب بڑا نقصان سیاحت کی صنعت کو ہوا ہے جو تقریبا تباہ ہوچکی ہے ان کا کہنا ہے کہ جن ملکوں کی معیشت سیاحت سے وابستہ تھی وہ چندہ ماہ کے دوران دنیا کے امیر ممالک کی فہرست سے نکل کر غریب ممالک کی فہرست میں شامل ہورہی ہیں.

اپنا تبصرہ بھیجیں