توہین عدالت کیس، رانا شمیم کو بیان حلفی جمع کرانے کیلئے 4 اپریل تک کی آخری مہلت

اسلام آباد ہائیکورٹ نے گلگت بلتستان کے سابق چیف جج رانا شمیم کو توہین عدالت کیس میں بیان حلفی جمع کرانے کیلئے 4 اپریل تک کا آخری موقع دیدیا۔

اسلام آباد ہائی کورٹ گلگت بلتستان کے سابق چیف جج رانا شمیم کو بیان حلفی جمع کرانے کا آخری موقع دیدیا۔ دوران سماعت چیف جسٹس نے استفسار کیا رانا صاحب کیا آپ نے اپنا بیان حلفی جمع کروا دیا ہے۔ رانا شمیم نے بیان حلفی جمع کرانے کیلئے تین ہفتوں کا وقت دینے کی استدعا کرتے ہوئے کہا کہ میں نے بیان حلفی وکیل کو دیا ہے انکے جائزہ لینے کے بعد جمع کروا دونگا۔

چیف جسٹس ریمارکس دیے کہ اپ ایک لا افیسررہے ہیں۔۔آپ ایسا رویہ اختیار نہ کریں۔ آپ نے بیان حلفی لیک ہونے پر انصار عباسی کو کوئی نوٹس بھی نہیں بھیجا۔ رانا شمیم نے بتایا کہ میرے وکیل نے مجھے روکا ہے۔ اگر معلوم ہوتا کہ بیان حلفی کیسے لیک ہوا تو اخبار کو نوٹس بھیجوا دیتا۔

اٹارنی جنرل نے دلائل دیئے کہ اپ انٹراکورٹ اپیل دائر کر سکتے ہیں تو بیان حلفی کیوں جمع نہیں کروا سکتے۔ عدالت نے بیان حلفی جمع کروانے کا اخری موقع دیتے ہوئے کیس کی سماعت 4 اپریل تک ملتوی کردی۔

سماعت کے بعد گفتگو کرتے ہوئے رانا شمیم نے کہا کہ میرے وکیل سرجری کے باعث بیڈ ریسٹ پر ہیں۔ بیان حلفی شائع کرنے والے اخبار کو نوٹس بھیجوانے کے حوالے سے اپنے وکیل سے مشاورت کے بعد فیصلہ کیا جائے گا۔

رانا شمیم نے نواز شریف کے دفتر میں بیٹھ کر بیان حلفی لکھوانے کے الزامات کی ایک بار پھر تردید کردی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں