وزیر اعظم شہباز شریف کی زیر صدارت معاشی ٹیم کا اجلاس، قرضوں کا بڑھتا حجم زیر غور

وزیراعظم شہباز شریف کی زیر صدارت معاشی ٹیم کا اجلاس ہوا۔ اجلاس میں بیرونی ادائیگیوں کا دباؤ ، مہنگائی کے بلند اشاریئے اور قرضوں کا بڑھتا حجم زیر غور آیا۔

وزیراعظم شہبازشریف نے ملک کو درپیش سنگین صورتحال اور معاشی چیلنجز سے نکلنے کے لئے ہنگامی بنیادوں پر معاشی تجاویز اور سفارشات کی تیاری کی ہدایات جاری کر دیں۔ یہ تجاویز زراعت، صنعت، سرمایہ کاری، بینکاری، تاجر و کاروباری برادری سمیت تمام متعلقہ طبقات کی آراء کی روشنی میں مرتب کی جائیں گی۔ نیشنل اکنامک کونسل تشکیل دینے کا فیصلہ بھی کر لیا گیا۔ فوری ریلیف اور ہنگامی اقدامات کے لیے معاشی ٹیم کو ٹاسک سونپ دیا۔ کونسل غیرجانبدار اور ممتاز معاشی ماہرین پر مشتمل ہو گی۔ وزارت عظمی کا منصب باضابطہ سنبھالنے کے بعد وزیراعظم کی زیرصدارت ہنگامی اجلاس میں معاشی ماہرین کو سفارشات کی تیاری کا حکم دے دیا گیا ۔ سیکریٹری خزانہ نے ملکی معاشی صورتحال، ریونیوز، بجٹ خساروں، داخلی اور بیرونی قرض کی صورتحال سمیت مجموعی قومی بیلنس شیٹ سے متعلق تفصیلی بریفنگ دی۔ وزیراعظم شہبازشریف نے ہدایت کی کہ معاشی صورتحال اور سنگین مالی خطرات کو دیکھتے ہوئے فوری، وسط اور طویل المدتی اہداف کا واضح تعین کریں۔ پالیسی آپشنز پر جامع سفارشات پیش کریں تاکہ ان کی روشنی میں ٹھوس اقدامات لئے جاسکیں۔

وزیراعظم نے عوام کو ریلیف دینے اور مہنگائی پر قابو پانے کے حوالے سے بھی جامع تجاویز مرتب کرنے کی ہدایات جاری کیں۔ رمضان المبارک میں رمضان بازار کی مانیٹرنگ اور اشیاء ضروریہ کی قیمتوں میں فوری کمی لانے کی بھی خصوصی ہدایات جاری کیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں