تحریک انصاف اور مسلم لیگ ق نے وزیر اعلیٰ کے انتخاب کی کارروائی مسترد کردی

تحریک انصاف اور مسلم لیگ ق نے وزیر اعلیٰ کے انتخاب کی کارروائی مسترد کردی۔

پی ٹی آئی رہنماء فیاض چوہان نے کہا گیلری اسمبلی کا حصہ نہیں، وزیر اعلیٰ کے انتخاب کو نہیں مانتے، عدالت ازخود نوٹس لے۔ اُنہوں نے پی ٹی آئی رکن نے عدالت سے ڈپٹی اسپیکر کی گئی کارروائی منسوخ کرنے کا بھی مطالبہ کردیا۔

ادھر چودھری پرویز الہٰی نے مسلم لیگ ن پر قاتلانہ حملے کا الزام عائد کیا۔ اُنہوں نے کہا کہ ظلم کی انتہاء کی ہوئی ہے، میرا بازو توڑ دیا گیا، مجھ پر بھی تشدد کیا گیا اور ساتھ اسٹاف کو بھی مارا ہے۔

انہوں نے کہا کہ یہ سب ساری پلاننگ کے تحت فلم چلی ہے، عدالتیں صرف رات کو ان کے لیے کھلتی ہیں کسی مظلوم کے لیے نہیں کھلتیں۔ میں جاؤں کہاں؟ میرے لیے کوئی عدالت نہیں ہے۔

ق لیگی رہنماء نے مزید کہا اُنہوں نے حملہ کرکے مجھے مروانے کی کوشش کی، میں ان کے سوموٹو سے تنگ آگیا ہوں، سوموٹو ان کے لیے ہی آتا ہے جن کی اپروچ ہو، میری کوئی اپروچ نہیں۔

چودھری پرویز الہٰی مزید بولے اسمبلی کے اندر پہلی بار پولیس آئی جس نے تشدد کیا۔ اس سارے معاملے میں آئی جی پنجاب شامل ہے۔ آئی جی پنجاب کی شہبازشریف سے بات ہوئی تھی۔ ن لیگ نے گوالمنڈی کے غنڈے بلوائے جنہوں نے حملہ کیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں